Romantic Urdu Poetry 2016

کٹھن اندھیروں کی راہ گزر پہ
چراغِ صبح جلا جلا کے
قسم سے آنکھیں بھی تھک گئیں ہیں
تمہارے آنسو چھپا چھپا کے
کیا خبر تھی کہ اک چہرے سے
کتنے چہرے کشید ہوں گے
میں تھک گیا ہوں تمہارے چہروں کو
آئینے میں سجا سجا کے
ہم اتنے سادہ مزاج کب تھے
مگر سرابوں کی رہ گزر پہ
فریب دیتا رہا زمانہ
تمہاری صورت دکھا دکھا کے
عجب تناسب سے ذہن و دل میں
خیال تقسیم ہو رہے ہیں
مجھے محبت سے ہو گئی ہے

تمہیں محبت سکھا سکھا کے

************************

کبھی ایسا بھی ہوتا ہے
کہ جس کو ہمسفر جانیں
کہ جو شریک درد ہو
وہی ہم سے بچھڑ جائے
کبھی ایسا بھی ہوتا ہے؟
کہ آنکھیں جن خوابوں کو
حقیقت جان بیٹھی ہوں
وہ سب سپنے بکھر جائیں
کبھی ایسا بھی ہوتا ہے؟
کہ جس کے ساتھ پہروں ساعتیں
ہم نے گزاری ہوں
اسی سے ربط ٹوٹ جائے
کبھی ایسا بھی ہوتا ہے؟
خزاؤں کے دیوانے کو
بہاروں میں بہاروں سے محبت ہونے والی ہو
اور موسم بدل جائے
کبھی ایسا بھی ہوتا ہے؟
کہ جس کے نام کے آگے ہمارا نام آیا ہو
جسے محرم بنایا ہو
اسی کو اپنے ہاتھوں سے، کسی کو سونپ کر آئیں


********************


ﻭﻓﺎ ﮐﮯ ﻗﯿﺪ ﺧﺎﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﺰﺍﺋﯿﮟ
ﮐﺐ ﺑﺪﻟﺘﯽ ﮨﯿﮟ
ﺑﺪﻟﺘﺎ ﺩﻝ ﮐﺎ ﻣﻮﺳﻢ ﮨﮯ ﮨﻮﺍﺋﯿﮟ ﮐﺐ
ﺑﺪﻟﺘﯽ ﮨﯿﮟ
ﻟﺒﺎﺩﮦ ﺍﻭﮌﮪ ﮐﮯ ﻏﻢ ﮐﺎ ﻧﮑﻞ ﺟﺎﺗﮯ
ﮨﯿﮟ ﺻﺤﺮﺍ ﮐﻮ
ﺟﻮﺍﺏ ﺁﺋﮯ ﮐﮧ ﻧﮧ ﺁﺋﮯ، ﺻﺪﺍﺋﯿﮟ
ﮐﺐ ﺑﺪﻟﺘﯽ ﮨﯿﮟ
ﺳﺮﻭﮞ ﭘﺮ ﺩﮬﻮﭖ ﮨﮯ ﻏﻢ ﮐﯽ
ﺩﻟﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻭﺧﺸﺘﯿﮟ ﮐﺘﻨﯽ،
ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺩﻝ ﮐﮯ ﺻﮩﺮﺍ ﮐﯽ
ﻓﻀﺎﺋﯿﮟ ﮐﺐ ﺑﺪﻟﺘﯽ ﮨﯿﮟ،
ﻣﯿﺮﯼ ﺳﺎﺭﯼ ﺩﻋﺎﺋﯿﮟ ﺗﻢ ﺳﮯ ﮨﯽ
ﻣﻨﺴﻮﺏ ﮨﯿﮟ ﺟﺎﻧﺎﮞ
ﻣﺤﺒﺖ ﮨﻮ ﺍﮔﺮ ﺳﭽﯽ ﺩﻋﺎﺋﯿﮟ ﮐﺐ
ﺑﺪﻟﺘﯽ ﮨﯿﮟ
ﮐﻮﺋﯽ ﭘﺎ ﮐﺮ ﻧﺒﮭﺎﺗﺎ ﮨﮯ، ﮐﻮﺋﯽ
ﮐﮭﻮ ﮐﺮ ﻧﺒﮭﺎﺗﺎ ﮨﮯ
ﻧﺌﮯ ﺍﻧﺪﺍﺯ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﻭﻓﺎﺋﯿﮟ ﮐﺐ
ﺑﺪﻟﺘﯽ ﮨﯿﮟ


**************************


ﻣﺠﮭﮯ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ
ﮐﮧ ﻣﯿﺮﯼ ﺫﺍﺕ ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺭ
ﺗﯿﺮﯼ ﭼﺎﮨﺖ ﺑﮭﺮﮮ ﻣﻮﺳﻢ ﮐﯽ
ﺑﮩﺖ ﻣﻌﺼﻮﻡ ﺧﻮﺍﮨﺶ ﺗﮭﯽ
ﺟﺴﮯ ﺑﺲ ﯾﮧ ﺗﻤﻨﺎ ﺗﮭﯽ
ﮐﮧ ﺗﯿﺮﮮ ﻧﺮﻡ ﺣﺮﻓﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﻼﺣﺖ
ﺗﯿﺮﮮ ﻟﮩﺠﮯ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﭼﮭﻮ ﻟﮯ
ﺍﺳﮯ ﺑﺲ ﯾﮧ ﺗﻤﻨﺎ ﺗﮭﯽ
ﻣﺠﮭﮯ ﺑﺲ ﺍﺗﻨﯽ ﺣﺴﺮﺕ ﺗﮭﯽ
ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﮨﺎﺗﮫ ﻣﯿﺮﮮ ﮨﺎﺗﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ
ﮨﻤﯿﺸﮧ ﻧﮧ ﺭﮨﮯ ۔۔۔ ﺯﻧﺠﯿﺮ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ
ﻣﮕﺮ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﺗﻮ ﮨﻮ
ﮐﮧ ﺟﺐ ﻣﯿﺮﺍ ﺍﺣﺴﺎﺱ ﺗﻨﮩﺎ ﮨﻮ
ﺍﻭﺭ ﻣﯿﺮﺍ ﮨﺎﺗﮫ ﺧﺎﻟﯽ ﮨﻮ !
ﻣﺠﮭﮯ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻣﯿﺮﯼ ﺫﺍﺕ ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺭ
ﺗﯿﺮﯼ ﭼﺎﮨﺖ ﺑﮭﺮﮮ ﻣﻮﺳﻢ ﮐﯽ ﺑﮩﺖ ﻣﻌﺼﻮﻡ
ﺧﻮﺍﮨﺶ ﺗﮭﯽ
ﺟﺴﮯ ﺑﺲ ﺍﺗﻨﺎ ﺳﺎ ﺩﮐﮫ ﮨﮯ
ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﮨﺎﺗﮫ ﻣﻞ ﺟﺎﺗﺎ....?

*********************

ﺍﮮﮔﺮﺩشِ ﺩﻭﺭﺍﮞ، اے ﻋُﻤﺮ ﺭﻭﺍﮞ
  ﮐﭽﮫ ﭘَﻞ ﮐﮯ لیۓ ﺳَﺴﺘﺎﻧﮯ ﺩﮮ
ﯾﮧ ﻧﺎﺗﮯ، ﺭﯾﺖ، ﯾﮧ ﺭﺳﻢ ﻭ ﺭﻭﺍﮦ
ﺍِﻥ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺁﻧﮑﮫ ﭼُﺮﺍﻧﮯ ﺩﮮ
ﯾﮧ ﺟﺒﺮِ ﻣُﺴﻠﺴﻞ رِﺷﺘﻮﮞ ﮐﮯ
ﯾﮧ ﺑﻨﺪﮬﻦ ﺁﻧﺴﻮ ﺁھﻮﮞ ﮐﮯ
ﺍﺏ ﺯﻧﻨﺠﯿﺮﯾﮟ ﺳﯽ ﻟﮕﺘﯽ ھﯿﮟ
ﺍِﻥ ﺯﻧﺠﯿﺮﻭﮞ ﺳﮯ ﭘَﻞ ﺩﻭ ﭘَﻞ
ﺗﮭﻮﮌﯼ ﺳﯽ ﻣﺠﮭﮯ ﺁﺯﺍﺩﯼ ﺩﮮ
ﺍﮮ ﻋُﻤﺮ ﺭﻭﺍﮞ ﮐﭽﮫ ﭨﮭﮩﺮ ﺯﺭﺍ
ﺍﮮ ﺩﻝ ﮐﯽ ﺧﻠِﺶ ﮐﭽﮫ ﭼﯿﻦ ﺗﻮ ﻟﮯ
ﺍِﺱ ﺩﺷﺖِ ﺍﻟﻢ ﻣﯿﮟ ﺩﯾﺪﺋﮧ ﻧﻢ
ﮐُﭽﮫ ﺧﻮﺍﺏ ﺳﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﮐﺮﺗﯽ ھﯿﮟ
ﺧﻮﺵ فہمی ﮐﮯ ﺑﮩﻼﻭﻭﮞ ﺳﮯ
ﮐﭽﮫ ﺣﺮﻑِ ﺗﺴﻠّﯽ ﺩﯾﺘﯽ ھﯿﮟ
ﺍﮮ ﻋُﻤﺮ ﺭﻭﺍﮞ ﮐُﭽﮫ ﭘَﻞ ﮐﮯلیۓ
ﺁﺳﻮﺩﮦ ﻧﮕﺮ ﻣﯿﮟ ﺟﺎ ﻧﮯ ﺩﮮ
ﺍِﺱ ﺷﻮﺥ ﻧﻈﺮ ﺳﮯ ﭘﻮﭼﮫ ﺗﻮ ﻟﯿﮟ
ﺍِﺱ ﺭﺍﮦ ﭘﮧ ﮐﯿﻮﮞ یہ ﭘﺎﮔﻞ ﺩﻝ
ﺍﻧﺠﺎﻧﯽ ﻟﮯ ﭘﮧ ﺩﮬﮍﮐﺎ ھﮯ
ﺍﺱ ﻣﻮﮌ ﭘﮧ ﮐﯿﻮﮞ ﯾﮧ ﺩﺍﻣﻦ ﺩﻝ
ﭘﮭﺮﮐﺲ ﮐﮯﺁ ﮔﮯ ﭘﮭﯿﻼ ھﮯ
ﯾﮧ ﻧﻈﺮﯾﮟ ﺍُﻧﮑﯽ ﺭﺍھﻮﮞ ﻣﯿﮟ
ﮐﯿﻮﮞ ﺳﺠﺪﮦ ﺭﯾﺰﯼ ﮐﺮﺗﯽ ھﯿﮟ
ﺍﮮﮔﺮﺩﺵ ﺩﻭﺭﺍﮞ ﺗﻮ ھﯽ ﺑﺘﺎ
ﺍﺱ ﺩﺭﺩ ﮐﺎﺣﺎﺻِﻞ ھﺠﺮ ھﮯ ﮐﯿﺎ....... ؟؟؟

***********************

کسی پر نظم لکھنے سے

کوئی مِل تو نہیں جاتا

کوئی تعریف

بانہوں کے برابر تو نہیں ھوتی

کسی آواز کے پاوں

کبھی دل پر نہیں چلتے

کبھی کشکول میں

قوس و قزح اُتری نہیں دیکھی

صحیفہ رِحل پر رکھنے سے

قرآں تو نہیں بنتا

کسی نے آج تک

شاعر کے آنسو

خود نہیں پونچھے

دلاسہ ، لفظ کی حد تک ھی اپنا کام کرتا ھے

کسی خواھش کو

سینے سے لگانے

کی اجازت تک نہیں ھوتی

تمھاری ضد کو پُورا کر دیا دیکھو

ستارے ، چاند، سُورج ، روشنی، خوشبو،

تمھارے دَر پہ کیا کیا دھر دیا دیکھو

 گُلِ فردا !!
ابھی کِھل جاو ! کہنے سے


کوئی کِھل تو نہیں جاتا

کسی پر نظم لکھنے سے

کوئی مِل تو نہیں جاتا

*********************

ﺗﻤﮭﯿﮟ ﺟﻮ ﺑﮯﺳﺒﺐ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ
ﺧﻔﺎ ﮬﻮﻧﮯ ﮐﯽ ﻋﺎﺩﺕ ﮬﮯ
ﻳﻪ ﺁﻏﺎﺯ ﺟﺪﺍﺋﯽ ﮬﮯ ؟
ﮐﻪ ﺍﻧﺪﺍﺯ ﻣﺤﺒﺖ ﮬﮯ ؟
ﻭﻓﺎ ﮐﮯ ﺭﻧﮓ ﻣﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﻮ
ﺟﻔﺎ ﺍﭼﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﻫﻮﺗﻰ
ﮐﺴﯽ ﺳﮯ ﭘﯿﺎﺭ ﻣﯿﮟ ﺍﺗﻨﯽ
ﺍﻧﺎ ﺍﭼﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﻫﻮﺗﻰ
ﭼﻠﻮ ﺍﺏ ﻣﺎﻥ ﺑﮭﯽ ﺟﺎﺅ
ﺑﻬﺖ ﺳﯽ ﻫﻮ ﭼﮑﯽ ﺭﻧﺠﺶ
ﮐﺴﯽ ﺩﻥ ﺍﻭﺭ ﮐﺮ ﻟﯿﻨﺎ
ﻳﻪ ﭘﻮﺭﯼ ﺍﭘﻨﯽ ﺗﻢ ﺧﻮﺍﮨﺶ
ﻓﻘﻂ ﻛﻬﻨﮯ ﮐﯽ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﮬﯿﮟ
ﻧﺒﮭﺎﺗﺎ ﮐﻮﻥ ﮬﮯ ﮐﺲ ﮐﻮ ...... ؟؟
ﭼﻠﻮ ﺍﺏ ﺩﯾﮑﮫ ﻟﯿﺘﮯ ﮬﯿﮟ
ﻣﻨﺎﺗﺎ ﮐﻮﻥ ﮬﮯ ﮐﺲ ﮐﻮ ........ ؟

**********************

کل ہلکی ہلکی بارش تھی
  کل تیز ہوا کا رقص بھی تھا
کل پھول بھی نکھرے نکھرے تھے
کل ان پہ آپ کا عکس بھی تھا
کل بادل کالے گہرے تھے
کل چاند پہ لاکھوں پہرے تھے
کچھ ٹکڑے آپ کی یاد کے
بڑی دیر سے دل میں ٹہرے تھے
کل یادیں الجھی الجھی تھیں
اور کل تک یہ نہ سلجھی تھیں
کل یاد بہت تم آئے تھے
کل یاد بہت تم آئے تھے


***********************

ﻣﺠﮭﮯ ﻟﮯ ﭼﻞ ﺍﭘﻨﮯ ﺳﻨﮓ ﭘﯿﺎ
ﻣﺠﮭﮯ ﻟﮯ ﭼﻞ ﺍﭘﻨﮯ ﺳﻨﮓ ﭘﯿﺎ
 ﻣﺮﯼ ﺁﻧﮑﮫ ﻣﯿﮟ ﺗﯿﺮﮮ ﺭﻧﮓ ﭘﯿﺎ
ﺗﺮﮮ ﻧﺎﻡ ﮐﯽ ﻣﺎﻻ ﺟﭙﺘﺎ ﮨﮯ
ﻣﯿﺮﺍ ﺭﻭﻡ ﺭﻭﻡ ﺍﻧﮓ ﺍﻧﮓ ﭘﯿﺎ
ﺍﮎ ﺑﺲ ﺍﺗﻨﯽ ﺳﯽ ﺧﻮﺍﮨﺶ ﮨﮯ
ﻣﺠﮭﮯ ﺭﻧﮓ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ﺭﻧﮓ ﭘﯿﺎ
ﺍﺏ ﻣﺠﮫ ﮐﻮ "ﻣﯿﮟ" ﺳﮯ "ﺗﻮ" ، ﮐﺮ ﺩﮮ
ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ﺁﭖ ﺳﮯ ﺗﻨﮓ ﭘﯿﺎ

**************************

ﭘﯿﺎﺭ ﮐﮯ ﺳﻤﻨﺪﺭ ﻣﯿﮟ
ﭘﯿﺎﺭ ﮐﮯ ﺳﻤﻨﺪﺭ ﻣﯿﮟ
ﮨﺮ ﺍﺗﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﮐﻮ
ﮐﺸﯿﺎﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻠﺘﯿﮟ
ﺩﻭﺭ ﺩﻭﺭ ﺗﮏ ﺟﺎﻧﺎﮞ
ﺩﮬﻮﭖ ﮐﯽ ﻣﺴﺎﻓﺖ ﮨﮯ
ﺍﻭﺭ ﮐﮩﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﭘﻞ ﺑﮭﺮ ﮐﻮ
ﺩﮬﻮﭖ ﮐﮯ ﻣﺴﺎﻓﺮ ﭘﺮ
ﺳﺎﺋﺒﺎﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮭﻠﺘﮯ
ﺍﺱ ﻋﺠﺐ ﺳﻤﻨﺪﺭ ﻣﯿﮟ
ﻋﻤﺮﮐﯽ ﺭﯾﺎﺿﺖ ﮐﮯ
ﺑﻌﺪ ﮨﻢ ﻧﮯ ﺟﺎﻧﺎ ﮨﮯ
ﺟﺲ ﻃﺮﺡ ﻓﻀﺎﺅﮞ ﻣﯿﮟ
ﺍﮌﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﭘﻨﭽﮭﯽ ﭘﺮ
ﺑﺮﺱ ﮨﺎ ﺑﺮﺱ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ
ﺁﺳﻤﺎﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮭﻠﺘﮯ
ﺑﺤﺮِ ﺑﯿﮑﺮﺍﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ
ﺑﮭﯿﺪ ﺑﮭﯿﺪ ﺭﮨﺘﺎ ﮨﮯ
ﺭﺍﺯﺩﺍﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮭﻠﺘﮯ
ﺑﺎﻡ ﻭ ﺩﺭ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻠﺘﮯ
ﺁﺳﺘﺎﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮭﻠﺘﮯ
ﮨﺮ ﺍﺗﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﮐﻮ
ﮐﺸﺘﯿﺎﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻠﺘﯿﮟ
ﺍﻭﺭ ﻣﻞ ﺑﮭﯽ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﺗﻮ
ﺑﺎﺩﺑﺎﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮭﻠﺘﮯ
ﭘﯿﺎﺭ ﮐﮯ ﺳﻤﻨﺪﺭ ﻣﯿﮟ


************************


محبت ہے 
جبھی تو کچھ بھی کہتے ہو
تمہاری سرد مہری کے سمندر میں پڑے
چپ چاپ سہتے ہیں
محبت ہے
 جبھی تو ہم پرندوں کی طرح سے لوٹ آتے ہیں
تمہاری ذات کے گنجان برگد میں
جہاں پر کوئی ٹہنی بھی
ہماری خواہشوں کو گھونسلا رکھنے نہیں دیتی
محبت ہے 
جبھی تو ہم نے تیری یاد کا جگنو حسیں ،
روپہلے چہروں کی ضیاء میں آج تک کھویا نہیں
جبھی تو ہم دیے کی طرح جلتے ہیں سلگتے ہیں
تمھارے ہجر کی تاریک راتوں میں
ہماری خاک کو گر ہواؤں میں اڑاؤ گے
تو واپس لوٹ آئیں گے
ہمیں تو راکھ ہو کر بھی" تیرے قدموں میں رہنا ہے"
محبت ہے.


**************************

ﻣﯿﺮﮮ ﮨﻤﺴﻔﺮ ﻣﯿﺮﮮ ﺳﺎﺗﮫ ﺗﻢ
ﺳﺒﮭﯽ ﻣﻮﺳﻤﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺭﮨﺎ ﮐﺮﻭ
ﮐﺒﮭﯽ ﺩﮬﻮﺍﮞ ﺑﻦ ﮐﮯ ﺍﮌﺍ ﮐﺮﻭ
ﮐﺒﮭﯽ ﭘﮭﻮﻝ ﺑﻦ ﮐﮯ ﺍﮔﺎ ﮐﺮﻭ
ﮐﺒﮭﯽ ﺩﮬﻮﭖ ﺑﻦ ﮐﮯ ﮔﺮﺍ ﮐﺮﻭ
ﮐﺒﮭﯽ ﺷﺎﻡ ﺑﻦ ﮐﮯ ﭼﮭﺎﯾﺎ ﮐﺮﻭ
ﻣﯿﺮﮮ ﮨﻤﺴﻔﺮ ﻣﯿﺮﮮ ﺳﺎﺗﮫ ﺗﻢ
ﮐﺒﮭﯽ ﭼﺎﻧﺪﺑﻦ ﮐﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﮐﺮﻭ
ﮐﺒﮭﯽ ﺗﺎﺭﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﮨﻨﺴﺎ ﮐﺮﻭ
ﮐﺒﮭﯽ ﺳﺎﻧﺴﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺗﻢ ﺑﺴﺎ ﮐﺮﻭ
ﮐﺒﮭﯽ ﺁﻧﺴﻮ ﻣﯿﮟ ﺑﮩﺎ ﮐﺮﻭ
ﻣﯿﺮﮮ ﮨﻤﺴﻔﺮ ﻣﯿﺮﮮ ﺳﺎﺗﮫ ﺗﻢ
ﮐﺒﮭﯽ ﺭﻧﮕﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺗﻢ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﮐﺮﻭ
ﮐﺒﮭﯽ ﺧﻮﺷﺒﻮ ﺳﮯ ﭼﮭﻮﺍ ﮐﺮﻭ
ﮐﺒﮭﯽ ﻧﻈﺮﻭﮞ ﺳﮯ ﺗﻢ ﭼﮭﭙﺎ ﮐﺮﻭ
ﮐﺒﮭﯽ ﺳﭙﻨﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﻣﻼ ﮐﺮﻭ
ﻣﯿﺮﮮ ﮨﻤﺴﻔﺮ ﻣﯿﺮﮮ ﺳﺎﺗﮫ ﺗﻢ
ﮐﺒﮭﯽ ﺁﺱ ﺑﻦ ﮐﮯ ﺩﻋﺎ ﮐﺮﻭ
ﮐﺒﮭﯽ ﺣﻮﺻﻠﮧ ﺑﮭﯽ ﺑﻨﺎ ﮐﺮﻭ
ﮐﺒﮭﯽ ﺍﻧﺘﻈﺎﺭ ﺑﮭﯽ ﺑﻨﺎ ﮐﺮﻭ
ﮐﺒﮭﯽ ﺳﺎﺗﮫ ﺳﺎﺗﮫ ﻣﯿﺮﮮ ﭼﻼ ﮐﺮﻭ
ﻣﯿﺮﮮ ﮨﻤﺴﻔﺮ ﻣﯿﺮﮮ ﺳﺎﺗﮫ ﺗﻢ
ﮐﺒﮭﯽ ﺑﺎﺭﺷﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻣﻼ ﮐﺮﻭ
ﮐﺒﮭﯽ ﺑﺎﺩﻟﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﭼﮭﭙﺎ ﮐﺮﻭ
ﮐﺒﮭﯽ ﮨﻢ ﺳﮯ ﺗﻢ ﮐﭽﮫ ﮔﻠﮧ ﮐﺮﻭ
ﮐﺒﮭﯽ ﺷﺮﻭﻉ ﺍﮎ ﻧﯿﺎ ﺳﻠﺴﻠﮧ ﮐﺮﻭ
ﻣﯿﺮﮮ ﮨﻤﺴﻔﺮ ﻣﯿﺮﮮ ﺳﺎﺗﮫ ﺗﻢ
ﮐﺒﮭﯽ ﻟﮩﺮﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﮩﺎ ﮐﺮﻭ
ﮐﺒﮭﯽ ﺳﺎﺣﻠﻮﮞ ﭘﮧ ﻣﻼ ﮐﺮﻭ
ﮐﺒﮭﯽ ﯾﻮ ﮨﯽ ﯾﺎﺩ ﺁﯾﺎ ﮐﺮﻭ
ﮐﺒﮭﯽ ﺧﯿﺎﻟﻮﮞ ﺳﮯ ﻧﮧ ﺟﺎﯾﺎ ﮐﺮﻭ
ﻣﯿﺮﮮ ﮨﻤﺴﻔﺮ ﻣﯿﺮﮮ ﺳﺎﺗﮫ ﺗﻢ
ﺳﺒﮭﯽ ﻣﻮﺳﻤﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺭﮨﺎ ﮐﺮﻭ


****************************

کوئی ا یسا مو سم ہو
کوئی ا یسا مو سم ہو
مجھ کو بھی بتا د ینا
جس میں ر و ٹھ جا نے سے
تم کو بھو ل جا نے سے
ا ک سکو ن ملتا ہو
چین د ل کو آ تا ہو
مو سم خز ا ں میں تو
جب ہو ا ہو یخ بستہ
جسم کی یہ تنہا ئ
تم کو یا د کر تی ھے
فصل گُل میں گُلشن کا ر نگ
د یکھ کر جیسے تن بدن سا جلتا ھے
ا و ر یا د آ تے ہو
گر میو ں کی شد ت تو
کچھ جنو ں بڑ ھا تی ھے
کیسے بھو ل سکتا ہو ں
با ر شو ں کے مو سم میں
جب فلک پہ با د ل ہو ں
ا و ر مینہ بر ستا ہو
تم ہی یا د آ تے ہو
کو ن سا ھے و ہ مو سم۔؟
جس میں بھو ل جا و ں میں
ا و ر تم نہ یا د آ و
کو ئ ا یسا مو سم ہو
مجھ کو بھی بتا د ینا

*********************

Tum udas mat hona
Agar kabhi koi lamha
Aisa zakhm de jaye
K koi bhi marham us
Zakhm ko na bher paye
Tum udas mat hona
Mehv-e-yaas mat hona
Zindgi k sub mausam
Aik se nahi hote
Saray log ay humdum
Aik se nahi hote
Zindgi ki rahon main
Hadsey bhi atey hain
Hadson se barh ker kuch
Waaqay bhi atay hain
Waqt k hi marhum se
Zakhm bher bhi jatay hain
Din buray hon ya achay
Bus guzer hi jatay hain
Waqt ko guzerna hai
Zakhm ko bhi bherna hai
Dard k charhay derya
Ko abhi uterna hai
Tum udas mat hona
Mehv-e-yaas mat hona


*************************

لیکن جب تم تھک جاؤ تو
جاگتے جاگتے تھک جاؤ تو ،
ایسا کرنا
آدھی راتیں مجھ کو دینا
تم کو پورے خواب ملیں گے
تم کیا جانو
درد حدوں کو چھو آئے تو
آنکھ میں آنسو جم جاتے ھیں
تم چاھو تو
ایسا کرنا
درد کی شدت میں سہ لوں گی
درد کا حاصل تم رکھ لینا
تم کیا جانو
ذات ادھوری ھو جائے تو
رشتہ آدھا رہ جاتا ھے
آدھارشتہ مجھ کو دے کر
پوری ہستی لے سکتے ھو ۔ ۔ ۔
کیا سودا ھے!
تم کیا جانو
آدھا رستہ کھو جائے تو
منزل یاس دیا کرتی ھے
تم چاھو تو
ایسا کرنا
آدھا رستہ میں رکھ لوں گی
پوری منزل تم لے لینا۔
لیکن جب تم تھک جاؤ تو ___


***********************

ﮐﭩﮭﻦ ﻣﺴﺎﻓﺘﯿﮟ
ﺑﮍﯼ ﮐﭩﮭﻦ ﯾﮧ ﻣﺴﺎﻓﺘﯿﮟ ﮨﯿﮟ
ﻣﯿﮟ ﺟﺲ ﮐﯽ ﺭﺍﮨﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑِﭽﮫ ﮔﯿﺎ ﮨﻮﮞ
ﺍُﺳﯽ ﮐﻮ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﺷﮑﺎﯾﺘﯿﮟ ﮨﯿﮟ
ﺷﮑﺎﯾﺘﯿﮟ ﺳﺐ ﺑﺠﺎ ﮨﯿﮟ ﻟﯿﮑﻦ
ﻣﯿﮟ ﮐﯿﺴﮯ ﺍُﺱ ﮐﻮ ﯾﻘﯿﮟ ﺩﻻﺅﮞ
ﺟﻮ ﻣﺠﮫ ﮐﻮ ﺟﺎﮞ ﺳﮯ ﻋﺰﯾﺰ ﺗﺮ ﮨﮯ
ﺍُﺳﮯ ﺑﮭﻼﺅﮞ ﺗﻮ ﻣﺮ ﻧﮧ ﺟﺎﺅﮞ
ﻣﯿﮟ ﺧﺎﻣﻮﺷﯽ ﮐﯽ ﺍﻧﺘﮩﺎ ﻣﯿﮟ
ﮐﮩﺎﮞ ﮐﮩﺎﮞ ﺳﮯ ﮔﺰﺭ ﮔﯿﺎ ﮨﻮﮞﺍُﺳﮯ ﺧﺒﺮ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ﺷﺎﯾﺪ
ﻣﯿﮟ ﺩﮬﯿﺮﮮ ﺩﮬﯿﺮﮮ ﺑﮑﮭﺮ ﮔﯿﺎ ﮨﻮﮞ۔

************************

میری بے لوث محبت کے گواہ چاند بتا 
میں نے ہر روز اسے یاد کیا ہے کہ نہیں 
وہ جو معروف ہے 
مشہور ہے لوگوں کیلیئے 
دل یہ اس کے لیئے آباد کیا ہے کہ نہیں 
میں نے ہر روز دعاؤں کے مہکتے گجرے 
جھلملاتی ہوئ آنکھوں کے بکھرتے آنسو 
گُدگُداتے ہوئے احساس کی پیاری خوشبو 
اس کے کوچے کی طرف روز پہنچائ کہ نہیں 
ٹہل کر دیر تلک رات کی تنہائ میں 
دل کی گہرائیوں سے میں نے اسے سوچا کہ نہیں 
سرسراتی ہوئ ان مست ہواؤں کی قسم 
کھا کر بتلاؤ اے چاند...!! 
اسے ٹوٹ کہ چاہا کہ نہیں 
تیری ہی چاندنی میں لاکھ ستاروں کے تلے 
میں نے پیغامِ محبت اسے بھیجا کہ نہیں 
میری بے لوث محبت کے گواہ چاند بتا...!! 
جسطرح رہ گیا صحراؤں میں رُل کر مجنوں 
میں نے حق قدموں کا اس طرح نبھایا کہ نہیں 
جس طرح کھائے تھے لیلیٰ نے جگر پر پتھر 
میں نے بھی دیپ محبت کا جلایا کہ نہیں؟ 
پھر بھی وہ مجھ سے خفا ہے تو گلا کس سے کروں؟
اے چاند تو ہی ہم راز ہے میرا.... 
تو ہی بتا گواہ کس کو کروں؟ 
ہے کیا سچائ اسے کون بتلائے گا بھلا؟ 
میری بے لوث محبت کے گواہ چاند تو ہی بتا


******************************

میری بے لوث محبت کے گواہ چاند بتا 
میں نے ہر روز اسے یاد کیا ہے کہ نہیں 
وہ جو معروف ہے 
مشہور ہے لوگوں کیلیئے 
دل یہ اس کے لیئے آباد کیا ہے کہ نہیں 
میں نے ہر روز دعاؤں کے مہکتے گجرے 
جھلملاتی ہوئ آنکھوں کے بکھرتے آنسو 
گُدگُداتے ہوئے احساس کی پیاری خوشبو 
اس کے کوچے کی طرف روز پہنچائ کہ نہیں 
ٹہل کر دیر تلک رات کی تنہائ میں 
دل کی گہرائیوں سے میں نے اسے سوچا کہ نہیں 
سرسراتی ہوئ ان مست ہواؤں کی قسم 
کھا کر بتلاؤ اے چاند...!! 
اسے ٹوٹ کہ چاہا کہ نہیں 
تیری ہی چاندنی میں لاکھ ستاروں کے تلے 
میں نے پیغامِ محبت اسے بھیجا کہ نہیں 
میری بے لوث محبت کے گواہ چاند بتا...!! 
جسطرح رہ گیا صحراؤں میں رُل کر مجنوں 
میں نے حق قدموں کا اس طرح نبھایا کہ نہیں 
جس طرح کھائے تھے لیلیٰ نے جگر پر پتھر 
میں نے بھی دیپ محبت کا جلایا کہ نہیں؟ 
پھر بھی وہ مجھ سے خفا ہے تو گلا کس سے کروں؟
اے چاند تو ہی ہم راز ہے میرا.... 
تو ہی بتا گواہ کس کو کروں؟ 
ہے کیا سچائ اسے کون بتلائے گا بھلا؟ 
میری بے لوث محبت کے گواہ چاند تو ہی بتا

************************

ﺍﺗﻨﮯ ﺑﮯ ﺟﺎﻥ ﺳﮩﺎﺭﮮ ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﮯ

ﺍﺗﻨﮯ ﺑﮯ ﺟﺎﻥ ﺳﮩﺎﺭﮮ ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﮯ ﻧﺎﮞ

ﺩﺭﺩ ﺩﺭﯾﺎ ﮐﮯ ﮐﻨﺎﺭﮮ ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﮯ ﻧﺎﮞ

ﺭﻧﺠﺸﯿﮟ ﮨﺠﺮ ﮐﺎ ﻣﻌﯿﺎﺭ ﮔﮭﭩﺎ ﺩﯾﺘﯽ ﮨﯿﮟ

ﺭﻭﭨﮫ ﺟﺎﻧﮯ ﺳﮯ ﮔﺰﺍﺭﮮ ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﮯ ﻧﺎﮞ

ﺭﺍﺱ ﺭﮨﺘﯽ ﮨﮯ ﻣﺤﺒﺖ ﺑﮭﯽ ﮐﺌﯽ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ

ﻭﮦ ﺑﮭﯽ ﻋﺮﺷﻮﮞ ﺳﮯ ﺍﺗﺎﺭﮮ ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﮯ ﻧﺎﮞ

ﮨﻮﻧﭧ ﺳﯿﻨﮯ ﺳﮯ ﮐﮩﺎﮞ ﺑﺎﺕ ﭼﮭﭙﯽ ﺭﮨﺘﯽ ﮨﮯ

ﺑﻨﺪ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﺳﮯ ﺍﺷﺎﺭﮮ ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﮯ ﻧﺎﮞ

ﮨﺠﺮ ﺗﻮ ﺍﻭﺭ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﻮ ﺑﮍﮬﺎ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ

ﺍﺏ ﻣﺤﺒﺖ ﻣﯿﮟ ﺧﺴﺎﺭﮮ ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﮯ ﻧﺎﮞ

ﺍﮎ ﺷﺨﺺ ﮨﯽ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﻣﺘﺎﻉ ﺩﻝ ﻭ ﺟﺎﮞ 

ﺩﻝ ﻣﯿﮟﺍﺏ ﻟﻮﮒ ﺑﮭﯽ ﺳﺎﺭﮮ ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﮯ ﻧﺎﮞ

*********************

بہت سے لوگ کہتے ہیں
کہ عورت کو سمجھنا ناممکن ہے
عورت اِک پہیلی ہے
جو اکثر حَل نہیں ہوتی
سُنو
تُم نے کبھی ساحل پہ بِکھری ریت دیکھی ہے؟
سمندر ساتھ بہتا ہے مگر
اِسکے مُقدّر میں ہمیشہ پیاس رہتی ہے
سُنو
تُم نے کبھی صحرا میں جلتے پیڑ دیکھے ہیں؟
سبھی کو چھاوٴں دیتے ہیں مگر
اِنکو صِلے میں دُھوپ مِلتی ہے
سُنو
تُم نے کبھی شاخوں سے بِچھڑتے پھول دیکھے ہیں؟
وه خُوشبو بانٹ دیتے ہیں بِکھر جانے تَلک لیکن
ہوا کا ساتھ دیتے ہیں
سُنو
تُم نے کبھی میلے میں بجتے ڈھول دیکھیں ہیں؟
عَجب ہے المیہ اِنکا بہت ہی شور کرتے ہیں
مگر .. اندر سے خالی ہیں
یہی عورت کا قِصّہ ہے 
یہی اِسکا فسانہ ہے 
بَس اِتنی سی پہیلی ہے


************************

اسے کہنا
محبت ایک صحرا ہے
اور صحرا میں کبھی بارش نہیں ہوتی
اور اگر باالفرض ہو بھی تو
فقط اک پل کو ہوتی ہے
اور اس کے بعد صدیاں خشک سالی میں گزرتی ہیں
اسے کہنا
محبت ایک صحرا ہے
اور اس میں وصل کی بارش کو صدیاں بیت جاتی ہیں
مگر پھر بھی نہیں ہوتی
اور اگر باالفرض ہو بھی تو
پھر اس کے بعد صدیوں کی جدائی مار دیتی ہے
اسے کہنا
محبت ایک صحرا ہے
اور صحرا کے سرابوں میں بھٹک جانے کا خدشہ سب کو رہتا ہے
کبھی پیاسے مسافر جب سرابوں میں بھٹک جائیں
انھیں رستہ نہیں ملتا
اسے کہنا
محبت ایک صحرا ہے
وفاؤں کے سرابوں سے اٹا صحرا
محبت کے مسافر گر
وفا کے ان سرابوں میں بھٹک جائیں
تو پھر وہ زندگی بھر ان سرابوں میں ہی رہتے ہیں
کبھی واپس نہیں آتے


********************************

No comments:

Post a Comment